کھلا جب چمن میں کتب خانۂ گل
نہ کام آیا ملا کو علم کتابی
متانت شکن تھی ہوائ بہاراں
غزل خواں ہوا پیرک اندرانی
کہا لالہ آتشیں پیرہن نے
کہ اسرار جاں کی ہوں میں بے حجابی
سمجھتا ہے جو موت خواب لحد کو
نہاں اس کی تعمیر میں ہے خرابی
نہیں زندگی سلسلہ روز و شب کا
نہیں زندگی مستی و نیم خوابی
حیات است در آتش خود تپیدن
خوش آں دم کہ ایں نکتہ ار بازیابی
اگر ز آتش دل شرارے بیری
تواں کرد زیر فلک آفتابی