پربت پربت اڑے پھرے ہے من پنچھی بے چین
جانے کہاں کہاں لے جائیں سانوریا کے نین

آؤں کہیں چھپ کے روتے ہیں ورنہ نگری میں
کوئی سنے نا ہوک دلوں کی کوئی سنے نا بین

لو دھیرے دھیرے دھندلا ہوتا جاتا ہے مہتاب
بیت چلا ہے جیون، جیسے بیت چلی ہو رین

ہم تو جیسے دل آنکھوں میں لے کے پھرتے ہوں
بیٹھے بیٹھے ہنسی میں رو دیتے ہیں نین

بولو فرحت آخر کس کو دیکھ کے آئے ہو
مدت بعد تیری آنکھوں میں دیکھا ہے سکھ چین
***