گو مسلکِ تسلیم و رضا بھی ہے کوئی چیز
پر غیرتِ اربابِ وفا بھی ہے کوئی چیز

کھلتا ہے ہر اک غنچۂ نو جوشِ نمو سے
یہ سچ ہے مگر لمسِ ہوا بھی ہے کوئی چیز

یہ بے رخیِ فطرتِ محبوب کے شاکی
اتنا بھی نہ سمجھے کہ ادا بھی ہے کوئی چیز

عبرت کدۂ دہر میں اے تارکِ دنیا
لذت کدۂ جرم و خطا بھی ہے کوئی چیز

لپکے کا گریباں پہ تو محسوس کرو گے
اے اہلِ دُوَل دستِ گدا بھی ہے کوئی چیز
٭٭٭