جانے کب آن گرے
زیر دیوار نہ جا

شان سے جاؤ تو ہے
یوں سرِ دار نہ جا

آ تیرا دکھ بانٹوں
شام بیمار نہ جا

کچھ نہ کچھ لڑ تو سہی
اس طرح ہار نہ جا

کچھ دلاسہ بھی تو دے
ہم کو یوں مار نہ جا
***