افق کو افق سے ملا دینے والے
یہ رستے ہیں کتنے تھکا دینے والے
یہ دن ہیں نئے اپنی خاصیّتوں میں
کئی نام دل سے بھلا دینے والے
بتا دینا عمریں اسے کھوجنے میں
جو مل جائے اس کو گنوا دینے والے
پھر اپنے کئے پر پشیمان رہنا
یہ ہم ہی ہیں خود کو سزا دینے والے