جب تری یاد کے جگنو چمکے
دیر تک آنکھ میں آنسو چمکے
سخت تاریک ہے دل کی دنیا
ایسے عالم میں اگر تُو چمکے
ہم نے دیکھا سرِ بازارِ وفا
کبھی موتی کبھی آنسو چمکے
شرط ہے شدتِ احساسِ جمال
رنگ تو رنگ ہے خوشبو چمکے
آنکھ مجبورِ تماشا ہے فرازؔؔ
ایک صورت ہے کہ ہر سُو چمکے
٭٭٭