بالکونیاں

بنانے والوں نے کیا سوچ کر بنائی تھی
سمندروں کی طرف بالکونیاں اپنی
جو اپنی آنکھ سے لہروں کو روک لیتے ہیں
نمی سے بھی تو بچائیں وہ کھڑکیاں اپنی
***