وہی جنوں ہے وہی کوچۂ ملامت ہے
شکستِ دل پہ بھی عہدِ وفا سلامت ہے
یہ ہم جو باغ و بہاراں کا ذکر کرتے ہیں
تو مدعا وہ گلِ تر وہ سرو قامت ہے
بجا یہ فرصتِ ہستی مگر دلِ ناداں
نہ یاد کر کے اسے بھولنا قیامت ہے
چلی چلے یونہی رسمِ وفا و مشقِ ستم
کہ تیغِ یار و سروِ دوستاں سلامت ہے
سکوتِ بحر سے ساحل لرز رہا ہے مگر
یہ خامشی کسی طوفان کی علامت ہے
عجیب وضع کا احمد فرازؔؔ ہے شاعر
کہ دل دریدہ مگر پیرہن سلامت ہے