بوئے گل، نالہ دل، دودِ چراغِ محفل
جو تری بزم سے نکلا، سو پریشاں نکلا
کس قدر خاک ہوا ہے دلِ مجنوں ، یا رب!
نقشِ ہر ذرہ، سویدائے بیاباں نکلا
دل میں پھر گریہ نے اک شور اُٹھایا، غالبؔ!
آہ جو قطرہ نہ نکلا تھا، سو طوفاں نکلا