میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں
وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا
ہوں ترے وعدہ نہ کرنے پر بھی راضی کہ کبھی
گوش، منت کشِ گلبانگِ تسلّی نہ ہوا
دل گزر گاہ خیالِ مے و ساغر ہی سہی
گر نفَس، جادۂ سر منزلِ تقوی نہ ہوا
مر گیا صدمۂ یک جنبشِ لب سے غالبؔ
ناتوانی سے ، حریف دمِ عیسی نہ ہوا