آواز

تو سمجھتا ہے کہ اشعار میں تو بولتا ہے
نہیں! ہر مصرعے میں اس دل کا لہو بولتا ہے
***