گریہ چاہے ہے خرابی، مرے کاشانے کی
در و دیوار سے ٹپکے ہے ، بیاباں ہونا
وائے دیوانگی شوق کہ، ہر دم مجھ کو
آپ جانا اُدھر، اور آپ ہی حیراں ہونا
کی مرے قتل کے بعد، اُس نے جفا سے توبہ
ہائے اُس زود پشیماں کا پشیماں ہونا