Results 1 to 2 of 2

Thread: گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,202
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5861
    Rep Power
    214774

    New5555 گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے


    گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے

    کبھی وہ دن تھے کہ زُلفوں میں شام رکھتے تھے

    تمھارے ہاتھ لگے ہیں تو جو کرو سو کرو

    وگرنہ تم سے تو ہم سو غلام رکھتے تھے

    ہمیں بھی گھیر لیا گھر زعم نے تو کھُلا

    کُچھ اور لوگ بھی اِ س میں قیام رکھتے تھے

    یہ اور بات ہمیں دوستی نہ راس آئی

    ہُوا تھی ساتھ تو خُوشبو مقام رکھتے تھے

    نجانے کون سی رُت میں بچھڑ گئے وہ لوگ

    جو اپنے دل میں بہت احترام رکھتے تھے

    وہ آ تو جاتا کبھی ، ہم تو اُس کے رستوں پر

    دئے جلائے ہوئے صبح و شام رکھتے تھے


    2gvsho3 - گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,202
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5861
    Rep Power
    214774

    Default Re: گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے

    2gvsho3 - گُریز شب سے سحر سے کلام رکھتے تھے

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •