Results 1 to 2 of 2

Thread: سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,188
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5861
    Rep Power
    214774

    New5555 سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں

    سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں
    جو ہم سے مل کے بچھڑ جائے وہ ہمارا نہیں

    ابھی سے برف بالوں میں الجھنے لگی ہے بالوں سے
    ابھی تو قرض مہ و سال بھی اتارا نہیں

    بس ایک شام اُسے آواز دی تھی ہجر کی شام
    پھر اس کے بعد تو ہم نے اسے پکارا نہیں

    ہوا کچھ ایسی چلی ہے کہ تیرے وحشی کو
    مزاج پرسی باد صبا گوارا نہیں

    سمندروں کو بھی حیرت ہوئی کے ڈوبتے وقت
    کسی کو ہم نے مدد کے لیے پکارا نہیں

    وہ ہم نہیں تھے پھر کون تھا سر بازار
    جو کہہ رہا تھا کہ بکنا ہمیں گوارہ نہیں

    ہم اہل دل ہیں محبت کی نسبتوں کے امین
    ہمارے پاس زمینوں کا کوئی گوشوارہ نہیں
    ٭٭٭



    2gvsho3 - سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,188
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5861
    Rep Power
    214774

    Default Re: سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں

    2gvsho3 - سمجھ رہے ہیں مگر بولنے کا یارا نہیں

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •