Results 1 to 2 of 2

Thread: مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ

    مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ
    گُل کیا غبارِ بوۓ سمن کو ترس گۓ
    ہاں اے سکوتِ تشنگیِ درد کچھ تو بول!
    کانٹے زباں کے آبِ سخن کو ترس گۓ
    دل میں کوئ صدا ہے نہ آنکھوں میں کوئ رنگ
    تن کے رفیق صحبتِ تن کو ترس گۓ
    اس عہدِ نو میں دورِ متاعِ وفا نہیں
    اس رسم و راہِ عہدِ کہن کو ترس گۓ
    منزلوں کی ٹھنڈکوں نے لہو سرد کر دیا
    جی سست ہے کہ پاؤں چبھن کو ترس گۓ
    اندھیر ہے کہ جلوۂ جاناں کے باوجود
    کوچے نظر کے ایک کرن کو ترس گۓ



    2gvsho3 - مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ

    2gvsho3 - مدّت ہوئ کہ سیرِ چمن کو ترس گۓ

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •