Results 1 to 2 of 2

Thread: اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا


    اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا
    ہزاروں جگنوؤں سے بھی اندھیرا کم نہیں ہوتا

    کبھی برسات میں شاداب بیلیں سوکھ جاتی ہیں
    ہرے پیڑوں کے گرنے سے کوئی موسم نہیں ہوتا

    بہت سے لوگ دل کو اس طرح محفوظ رکھتے ہیں
    کوئی بارش ہو یہ کاغذ ذرا بھی نم نہیں ہوتا

    بچھڑتے وقت کوئی بدگمانی دل میں آ جاتی
    اسے بھی غم نہیں ہوتا مجھے بھی غم نہیں ہوتا

    یہ آنسو ہیں انہیں پھولوں میں شبنم کی طرح رکھنا
    غزل احساس ہے احساس کا ماتم نہیں ہوتا
    ***



    2gvsho3 - اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا

    2gvsho3 - اداسی کا یہ پتھر آنسووں سے نم نہیں ہوتا

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •