Results 1 to 2 of 2

Thread: ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے

    ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے
    پھر بھی تیرے دیوانوں کی شہرت کتنی ہے!

    سُورج گھر سے نکل چکا تھا کرنیں تیز کیے
    شبنم گُل سے پوچھ رہی تھی ’’مہلت کتنی ہے!،،

    بے مقصد سب لوگ مُسلسل بولتے رہتے ہیں
    شہر میں دیکھو سناٹے کی دہشت کتنی ہے!

    لفظ تو سب کے اِک جیسے ہیں، کیسے بات کھلے؟
    دُنیا داری کتنی ہے اور چاہت کتنی ہے!

    سپنے بیچنے آ تو گئے ہو، لیکن دیکھ تو لو
    دُنیا کے بازار میں ان کی قیمت کتنی ہے!

    دیکھ غزالِ رم خوردہ کی پھیلی آنکھوں میں
    ہم کیسے بتلائیں دل میں وحشت کتنی ہے!

    ایک ادھورا وعدہ اُس کا، ایک شکستہ دل،
    لُٹ بھی گئی تو شہرِ وفا کی دولت کتنی ہے!

    میں ساحل ہوں امجدؔ اور وہ دریا جیسا ہے
    کتنی دُوری ہے دونوں میں، قربت کتنی ہے!

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


    2gvsho3 - ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے

    2gvsho3 - ہاتھ پہ ہاتھ دَھرے بیٹھے ہیں، فرصت کتنی ہے

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •