Results 1 to 2 of 2

Thread: تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر

    تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر
    تڑپ اٹھا میرا منصف بھی فیصلہ دے کر

    میرے خدا ، یہ برہنہ لباس پوش ہیں کون
    عذاب کیا یہ دیا مجھ کو چشم وا دے کر

    میں اب مروں کہ جیوں مجھ کو یہ خوشی ہے بہت
    اسے سکوں تو ملا مجھ کو بد دعا دے کر

    کیا پھر اس نے وہی جو خود اس نے سوچا تھا
    برا تو میں بھی بنا اس کو مشورہ دے کر

    میں اس کے واسطے سورج تلاش کرتا ہوں
    جو سو گیا میری آنکھوں کو رتجگا دے کر

    وہ رات رات کا مہماں تو عمر بھر کے لیے
    چلا گیا مجھے یادوں کا سلسلہ دے کر

    جو وا کیا بھی دریچہ تو آج موسم نے
    پہاڑ ڈھانپ دیا ابر کی ردا دے کر

    کٹی ہوئی ہے زمیں کوہ سے سمندر تک
    ملا ہے گھاؤ یہ دریا کو راستہ دے کر

    چٹخ چٹخ کے جلی شاخ شاخ جنگل کی
    بہت سرو ر ملا آگ کو ہوا دے کر

    پھر اس کے بعد پہاڑ اس کو خود پکاریں گے
    تو لوٹ آ ، اسے وادی میں اک صدا دے کر

    ستون ریگ نہ ٹھہرا عدؔیم چھت کے تلے
    میں ڈھے گیا ہوں خود اپنے کو آسرا دے کر




    2gvsho3 - تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر

    2gvsho3 - تمام عمر کی تنہائی کی سزا دے کر

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •