Results 1 to 2 of 2

Thread: ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,240
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5862
    Rep Power
    214774

    New5555 ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی

    ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی
    مصلحت پرستوں کی رہبری قیامت تھی

    منزل تمنا تک کون ساتھ دیتا ہے!
    گردِ سعِی لا حاصل ہر سفر کی قسمت تھی

    آپ ہی بگڑتا تھا، آپ من بھی جاتا ہے
    اس گریز پہلو کی یہ عجیب عادت تھی

    اُس نے حال پوچھا تو یاد ہی نہ آتا تھا
    کِس کو کِس سے شکوہ تھا، کس سے کیا شکایت تھی!

    دشت میں ہواؤں کی بے رُخی نے مارا ہے
    شہر میں زمانے کی پوچھ گچھ سے وحشت تھی

    یوں تو دن دہاڑے بھی لوگ لُوٹ لیتے ہیں
    لیکن اُن نگاہوں کی اور ہی سیاست تھی

    ہجر کا زمانہ بھی کیا غضب زمانہ تھا
    آنکھ میں سمندر تھا، دھیان میں وہ صورت تھی

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



    2gvsho3 - ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,240
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5862
    Rep Power
    214774

    Default Re: ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی

    2gvsho3 - ہر قدم گریزاں تھا، ہر نظر میں وحشت تھی

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •