Results 1 to 2 of 2

Thread: مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار


    مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار
    خُوب وقت آئے تم، اِس عاشقِ بیمار کے پاس
    مَیں بھی رُک رُک کے نہ مرتا، جو زباں کے بدلے
    دشنہ اِک تیز سا ہوتا، مِرے غمخوار کے پاس
    دیکھ کر تجھ کو، چمن بسکہ نُمو کرتا ہے
    خُود بخود، پہنچے ہے گُل، گوشۂ دستار کے پاس
    دَہَنِ شیر میں جا بیٹھیے ، لیکن، اے دل!
    نہ کھڑے ہو جیئے ، خُوبانِ دل آزار کے پاس
    مر گیا پھوڑ کے سر، غالبؔ وحشی، ہَے ہَے !
    بیٹھنا اُس کا وہ، آ کر، تری دیوار کے پاس

    2gvsho3 - مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار

    2gvsho3 - مُند گئیں ، کھولتے ہی کھولتے ، آنکھیں ، یک بار

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •