Results 1 to 2 of 2

Thread: یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو

    یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو
    وہ غزل کی سچی کتاب ہے، اُسے چپکے چپکے پڑھا کرو

    کوئ ہاتھ بھی نہ ملائے گا، جو گلے مِلو گے تپاک سے
    یہ نئے مزاج کا شہر ہے، ذرا فاصلے سے ملا کرو

    ابھی راہ میں کئ موڑ ہیں، کوئ آئے گا کوئ جائے گا
    تمھیں جس نے دل سے بھُلا دیا اسے بھُولنے کی دُعا کرو

    مجھے اشتہار سی لگتی ہیں، یہ محبّتوں کی کہانیاں
    جو کہا نہیں وہ سُنا کرو، جو سُنا نہیں وہ کہا کرو

    کبھی حسن ِ پردہ نشیں بھی ہو ذرا عاشقانہ لباس میں
    جو میں بن سنور کے کہیں چلوں، میرے ساتھ تم بھی چلا کرو

    یہ خِزاں کی زَرد سی شام میں، جو اُداس پیڑ کے پاس ہے
    یہ تمہارے گھر کی بہار ہے، اسے آنسؤوں سے ہرا کرو

    نہیں بے حجاب وہ چاند سا، کہ نظر کا کوئ اثر نہیں
    اُسے اتنی گرمی ِ شوق سے بڑی دیر تک نہ تکا کرو
    ***



    2gvsho3 - یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو

    2gvsho3 - یوں ہی بے سبّب نہ پھرا کرو، کوئ شام گھر بھی رہا کرو

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •