Results 1 to 2 of 2

Thread: شہرِ چارہ گراں

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 شہرِ چارہ گراں

    شہرِ چارہ گراں

    پس شہرِ چارہ گراں
    نرم آبی قباؤں میں ملبوس کُچھ نوجواں
    اپنے اپنے فرائض کی تکمیل میں
    مثلِ موجِ صبا ،پھر رہے ہیں
    آنسوؤں کا مداوا
    دُکھوں کی مسیحائی
    زخمِ ہُنر کی پذیرائی کرتے ہُوئے
    پھُول چہرہ،فرشتہ قبا،زندگی رنگ،شبنم زباں ،چاندنی لمس،عیسیٰ نفس چارہ گر مجھ کو بے طرح اچھے لگے
    جی یہ چاہا کہ اُن کے لیے کُچھ لکھوں
    اُن کے چہروں کی یہ مہرباں چاندنی
    اُن کی آنکھوں کی یہ نرم دل روشنی
    ان کے لہجوں کی غم خوار تابندگی
    ان کے ہونٹوں کی دلدار پیاری ہنسی
    یوں ہی روشن رہے، جگمگاتی رہے
    زندگی اُن کے ہمراہ ہنستی رہے
    یہ دُعا میرے ہونٹوں پہ لیکن ادھُوری رہی
    دفعتاً جانے کس سمت سے
    ایک انساں کا زخمی بدن ا گیا
    خُوں میں ڈوبا ہُوا،کرب آلوّّد چہرہ
    مرے ذہن پر اس طرح چھا گیا
    میری پلکوں کی مانند لہجہ بھی نم ہو گیا
    گفتگو کی قبا بھی لہُو رنگ ہونے لگی
    مگر جو مسیحا مِرے سامنے تھا
    کھڑا مُسکراتا رہا
    سلسلہ اُس کی باتوں کا چلتا رہا
    اُس کی آنکھوں میں ہلکا سا بھی دُکھ نہ تھا
    بلکہ وہ
    میری افسردگی دیکھ کر ہنس دیا___:
    ’’بی بی ! اس طرح تو روز ہوتا ہے
    کوئی کہاں تک پریشان ہو
    کون اوروں کے دُکھ مول لے
    روز کی بات ہے
    چھوڑیے بھی اسے۔آئیں باتیں کریں !‘‘
    میری آنکھیں تقدس کے پیکر کو حیرت سے تکنے لگیں
    میں فرشتوں کے پرسے تراشے ہُوئے
    نرم آبی لبادے میں ملبوس انسان کو دیکھتی رہ گئی
    مجھ کو لوگوں نے سمجھایا۔۔’’دیکھو۔۔سُنو۔۔
    یہ مسیحا ہیں ،ان کے لیے موت بھی
    عام سا واقعہ ہے،قیامت نہیں !‘‘
    چارہ سازی کی منزل مبارک انھیں
    پر یہاں تک یہ جس راہ سے آئے ہیں
    اُس میں ،ہر موڑ پر
    ان کے دِل کے پیروں تلے آئے ہیں
    نرم حسّاس دل کے عوض،چارہ سازی خریدی گئی
    اور یہ قیمت بہت ہی بڑی ہے۔۔بہت ہی بڑی
    سحاب تھا کہ ستارہ، گریز پا ہی لگا
    وہ اپنی ذات کے ہر رنگ میں ہَوا ہی لگا
    میں ایسے شخص کی معصومیت پہ کیا لکھوں
    جو مجھ کو اپنی خطاؤں میں بھی بھلا ہی لگا
    زباں سے چُپ ہے مگر آنکھ بات کرتی ہے
    نظر اُٹھائی ہے جب بھی تو بولتا ہی لگا
    جو خواب دینے پہ قادر تھا، میری نظروں میں
    عذاب دیتے ہُوئے بھی مجھے خدا ہی لگا
    نہ میرے لُطف پہ حیراں نہ اپنی اُلجھن پر
    مُجھے یہ شخص تو ہر شخص سے جُدا ہی لگا
    2gvsho3 - شہرِ چارہ گراں

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: شہرِ چارہ گراں

    2gvsho3 - شہرِ چارہ گراں

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •