Results 1 to 2 of 2

Thread: زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    candel زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں


    زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں
    دم ہوا کی موج ہے ، رم کے سوا کچھ بھی نہیں
    گل تبسم کہہ رہا تھا زندگانی کو مگر
    شمع بولی ، گریۂ غم کے سوا کچھ بھی نہیں
    راز ہستی راز ہے جب تک کوئی محرم نہ ہو
    کھل گیا جس دم تو محرم کے سوا کچھ بھی نہیں
    زائران کعبہ سے اقبال یہ پوچھے کوئی
    کیا حرم کا تحفہ زمزم کے سوا کچھ بھی نہیں!

    2gvsho3 - زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں

    2gvsho3 - زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہیں

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •