Results 1 to 2 of 2

Thread: سنکیانگ کا مختصر جائزہ

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,240
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5862
    Rep Power
    214774

    candel سنکیانگ کا مختصر جائزہ

    سنکیانگ کا مختصر جائزہ
    23176 93823278 - سنکیانگ کا مختصر جائزہ
    عبدالرئوف
    چین کے شمال مغرب میں واقع علاقے کو ’’سنکیانگ ویغور خود مختار‘‘ (مختصراََ سنکیانگ )کہا جاتا ہے۔ اس کا کل رقبہ 16 لاکھ 64ہزار مربع کلومیٹر سے کچھ زیادہ ہے۔ آٹھ ممالک سے ملحقہ یہ صوبہ رقبے کے اعتبار سے چین کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔مشرق سے مغرب تک سنکیانگ بالترتیب منگولیا ، روس ، قازقستان ، کرغزستان ، تاجکستان، افغانستان ، پاکستان اور بھارت سے ملحقہ ہے۔اس کی سرحدی حدودکی لمبائی 5600 کلومیٹر ہے۔ سنکیانگ چین کا سب سے زیادہ ممالک سے ملحقہ، سب سے زیادہ بیرونی خشک گودیوں کا حامل اور سب سے طویل سرحد وں والا صوبہ ہے۔ سنکیانگ چین کی اقلیتی قومیتوں کے پانچ خود مختار علاقوں میں سے ایک ہے۔اس میں ویغور ، قازق، ہوئی ، کرغز ، ، منگولیائی اور ہان سمیت تیرہ قومیتوں کے باشندے آباد ہیں۔ جغرافیہ: سنکیانگ سمندر سے دور ایشیا ء کے مرکز میں واقع ہے۔چاروں اطراف بلندو بالا پہاڑی سلسلے ہیں۔شمال سے جنوب تک بالترتیب ارٹائی ، تھیان شان اور، کھون لون نامی پہاڑی سلسلے پھیلے ہوئے ہیں۔پہاڑوں کے درمیان جونگور بیسن اور طالمور بیسن ہیں۔ چین کا دو تہائی صحرا ئی علاقہ سنکیانگ میں واقع ہے۔ جنوبی سنکیانگ کے تکلی مکان صحرا کا رقبہ تین لاکھ تیس ہزار مربع کلومیٹر ہے جو چین کا سب سے بڑا صحر اہے۔ شمالی سنکیانگ کے علاقے جونگور بیسن میں گربان تونگت صحرا چین کا دوسرا بڑا صحرا ہے۔یہ صحرا تیل ، قدرتی گیس اور معدنیات کی دولت سے مالامال ہے۔صحرا اور پہاڑ کے اطراف میں کئی دریا ، جھیلیں اور نخلستان پھیلے ہوئے ہیں۔سنکیانگ کے تمام شہر اور قصبے ان نخلستانوں میں واقع ہیں۔ سنکیانگ کی آب و ہوا معتدل یا نیم معتدل ہے۔ یہاں ہونیوالی بارش کی سالانہ اوسط مقدار 165.6 ملی میٹر ہے۔یہاں برف پوش پہاڑوں اور برفانی چوٹیوں سے منفرد، قدرتی اور نمکین آبی ذخیرے کی تشکیل ہوئی۔ اس خطے میں گلیشئرز 21.3 کروڑ مکعب میٹر کے علاقے پر پھیلے ہوئے ہیں۔پہاڑوں سے پگھلنے والی برف سے متعدد دریا اور جھیلیں وجود میں آئیں جن میں ایک ہزار مربع کلومیٹر پرمحیط میٹھے پانی کی سب سے بڑی جھیل ’’بوستن ‘‘ بھی شامل ہے۔ سنکیانگ کے مشرق میں واقع ترپان بیسن کی آئی دنگ جھیل سطح سمندر سے 154 میٹر نیچے ہے۔ یہ چینی سر زمین کا انتہائی نچلا حصہ ہے۔تارم بیسن کے علاقے میں تارم دریا کی کل لمبائی دو ہزار ایک سو کلومیٹر بنتی ہے جو چین کی اندرونی سر زمین کا سب سے لمبا دریا ہے۔سنکیانگ کے مختلف علاقوں میں موسم اورآبی وسائل کی صورتحال بھی مختلف ہے۔ یہاں سردیوں اور گرمیوں کے درجہ حرارت میں فرق بہت زیادہ ہے۔التائی چین کا سب سے سرد اور ترپان گرم ترین علاقہ ہے۔ تاریخ: سنکیانگ کو قدیم زمانے میں ’’مغربی علاقے‘‘کے طور پر جانا جاتا تھا۔دو ہزار سال سے زائد کے عرصے سے یہ چین کا ایک حصہ چلا آ رہا ہے۔ ساٹھ قبل از مسیح میں ہان شاہی خاندان نے سنکیانگ پر براہ راست حکمرانی شروع کی۔اس کے بعد ایک ہزار سے زائد برسوں میں سنکیانگ کے علاقے کے سرکاری ادارے چین کی مرکزی حکومت کی طرف سے قائم کئے جا رہے ہیں۔تین سو سال قبل چھینگ شاہی خاندان کی مرکزی حکومت سنکیانگ کے تمام علاقوں پر حکمرانی کرنے لگی۔ 1884ء میں سنکیانگ کو صوبے کا درجہ دیا گیا۔یوں چین کے مختلف صوبوں کے درمیان قریبی روابط قائم ہونے لگے۔ ستمبر 1949ء میں سنکیانگ میں پرامن طریقے سے آزادی کا اعلان ہوا۔ اسی سال یکم اکتوبر کو عوامی جمہوریہ چین کا قیام عمل میں آیا اورسنکیانگ دوسرے صوبوں کی طرح چین کا ایک خودمختار علاقہ بن گیا۔ ٭…٭…٭

    2gvsho3 - سنکیانگ کا مختصر جائزہ

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    20,240
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5862
    Rep Power
    214774

    Default Re: سنکیانگ کا مختصر جائزہ

    2gvsho3 - سنکیانگ کا مختصر جائزہ

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •