Results 1 to 2 of 2

Thread: گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو



    گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو


    عمر گزری ہے سجاتے ہوئے بام و در کو
    اس تمنا پہ کہ وہ جانِ بہار آئے گی
    فرشِ رہ دیدہ و دل تھے کہ وہ آسودہ خرام
    درد کی آگ کو گلزار بنا جائے گی
    اس توقع پہ خرابے رہے آغوش کشا
    کھل کے برسے گی اگر اب کے گھٹا چھائے گی
    ایک اک لمحہ قیامت کی طرح گزرا ہے
    آخر کار وہ محبوبِ نظر بھی آئی
    منتظر آنکھیں تو پتھرا ہی چکی تھیں لیکن
    کشتگانِ شبِ فرقت کی سحر بھی آئی
    جسم کیوں شل ہیں دھڑکتے ہوئے دل کیوں چپ ہیں
    جرسِ گل کی تو آواز ادھر بھی آئی

    آج پھر کرتے ہو کس زعم پہ زخموں کا شمار
    سر پھرو! وادی پُر خار میں یہ تو ہو گا
    کیوں نگاہوں میں ہے افسردہ چراغوں کا دھُواں
    آرزوئے لب و رخسار میں یہ تو ہو گا
    ایک سے ایک کڑی منزلِ جاں آئے گی
    رہگزارِ طلبِ یار میں یہ تو ہو گا

    ہونٹ سِل جائیں مگر جراتِ اظہار رہے
    دل کی آواز کو مدھم نہ کرو دیوانو!
    ڈھل چکی رات تو اب کہر بھی چھٹ جائے گی
    اب بھی امید کی لو کم نہ کرو دیوانو!
    آندھیاں آیا ہی کرتی ہیں ہر اک حبس کے بعد
    گل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو دیوانو!
    ٭٭٭




    2gvsho3 - گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو

    2gvsho3 - گُل شدہ شمعوں کا ماتم نہ کرو

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •