Results 1 to 2 of 2

Thread: جل پری

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    New5555 جل پری


    جل پری
    اس قدر دودھیا خوشنما ہنس کر
    اپنی جانب لپکتے ہُوئے دیکھ کر مُسکرائی
    مگر اس کی یہ مسکراہٹ ہنسی بننے سے قبل ہی چیخ میں ڈھل گئی
    اُس کا انکار بے سُود
    وحشت ، سراسیمگی ، اجنبی پھڑپھڑاہٹ میں گُم ہو گئی
    آہ و زاری کے با وصف
    مضبوط پَر اُس کا سارا بدن ڈھک چکے تھے!
    اُجلی گردن میں وحشت زدہ چونچ اُتری چلی جا رہی تھی
    اُس کے آنسو
    سمندر میں شبنم کی مانند حل ہو گئے!
    سِسکیاں
    تُند موجوں کی آواز میں بے صدا ہو گئیں !
    ہنس اپنے لہُو کی دہکتی ہُوئی وحشتیں
    نیم بے ہوش خوشبو کے رس سے بجھاتا رہا
    اور پھر اپنے پیاسے بدن کے مساموں پہ
    بھیگی ہُوئی لذّتوں کی تھکن اوڑھ کر اُڑ گیا!
    جل پری
    گہرے نیلے سمندر کی بیٹی
    اپنی مفتوح و نا منتظر کوکھ میں
    آسماں اور زمیں کے کہیں درمیاں رہنے والو ں کا
    بے شجرہ و بے نسب ورثے کا بوجھ تھامے ہُوئے
    آج تک رو رہی ہے!

    کیا کیا نہ خواب ہجر کے موسم میں کھو گئے
    ہم جاگتے رہے تھے مگر بخت سوگئے
    اُس نے پیام بھیجے تو رستے میں رہ گئے
    ہم نے جو خط لکھے تو ہَوا بُرد ہو گئے
    مَیں شہرِ گل میں زخم کا چہرہ کسے دکھاؤں
    شبنم بدست لوگ تو کانٹے چبھو گئے
    آنچل میں پھُول لے کے کہاں جا رہی ہُوں مَیں
    جو آنے والے لوگ تھے ، وہ لوگ تو گئے
    کیا جانیے ، اُفق کے اُدھر کیا طلسم ہے
    لَوٹے نہیں زمین پہ ، اِک بار جو گئے
    جیسے بدن سے قوسِ قزح پھوٹنے لگی
    بارش کے ہاتھ پھُول کے سب زخم دھو گئے
    آنکھوں میں دھیرے دھیرے اُتر کے پُرانے غم
    پلکوں میں ننھّے ننھّے ستارے پرو گئے
    وہ بچپنے کی نیند تو اب خواب ہو گئی
    کیا عُمر تھی کہ رات ہُوئی اور سوگئے!
    کیا دُکھ تھے ، کون جان سکے گا، نگارِ شب !
    جو میرے اور تیرے دوپٹّے بھگو گئے!

    ویسے تو کج ادائی کا دُکھ نہیں سہا
    آج اُس کی بے رُخی نے مگر دل دُکھا دیا
    موسم مزاج تھا ، نہ زمانہ سرشت تھا
    میں اب بھی سوچتی ہوں وہ کیسے بدل گیا
    دُکھ سب کے مشترک تھے مگر حوصلے جُدا
    کوئی بِکھر گیا تو کوئی مُسکرا دِیا
    جھوٹے تھے کیا ہُوئی کہ جو آنسو نہ بن سکی
    وہ درد کیا ہُوا کہ جو مصرعہ نہ بن سکا
    ایسے بھی زخم تھے کہ چھپاتے پھرے ہیں ہم
    درپیش تھا کسی کے کرم کا معاملہ
    آلودۂ سخن بھی نہ ہونے دیا اُسے
    ایسا بھی دُکھ ملا جو کسی سے نہیں کہا
    تیرا خیال کر کے میں خاموش ہو گئی
    ورنہ زبانِ خلق سے کیا کیا نہیں سُنا
    میں جانتی ہوں ، میری بھلائی اسی میں تھی
    لیکن یہ فیصلہ بھی کچھ اچھّا نہیں ہُوا
    میں برگ بر گ اُس کو نمو بخشتی رہی
    وہ شاخ شاخ میری جڑیں کاٹتا رہا


    2gvsho3 - جل پری

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    25,270
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214780

    Default Re: جل پری

    2gvsho3 - جل پری

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •