Results 1 to 2 of 2

Thread: جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی

  1. #1
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    24,638
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214779

    New5555 جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی


    جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی
    تو کیوں قریب ہوا شمع لا کے رکھی تھی

    فلک نے بھی نہ ٹھکانا کہیں دیا ہم کو
    مکاں کی نیو زمیں سے ہٹا کے رکھی تھی

    ذرا پھوار پڑی اور آبلے اگ آئے
    عجیب پیاس بدن میں دبا کے رکھی تھی

    اگرچہ خیمۂ شب کل بھی تھا اداس بہت
    کم از کم آگ تو ہم نے جلا کے رکھی تھی

    وہ ایسا کیا تھا کہ نا مطمئن بھی تھے اس سے
    اسی سے آس بھی ہم نے لگا کے رکھی تھی

    یہ آسمان ظفرؔ ہم پہ بے سبب ٹوٹا
    اڑان کون سی ہم نے بچا کے رکھی تھی
    ظفر گورکھپوری




    2gvsho3 - جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی

  2. #2
    Join Date
    Nov 2014
    Location
    Lahore,Pakistan
    Posts
    24,638
    Mentioned
    1562 Post(s)
    Tagged
    20 Thread(s)
    Thanked
    5876
    Rep Power
    214779

    Default Re: جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی

    2gvsho3 - جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •